Home / Islamic Stories / Emotional speech about Last word of Prophet PBHM

Emotional speech about Last word of Prophet PBHM

What were the last words of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) before he bade farewell to this world?.

Answer

Praise be to Allaah.

The last words of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) – before he bade farewell to this world – were: “O Allaah, (with) the higher companions”. This is the title that al-Bukhaari gave to a chapter in Kitaab al-Maghaazi in his Saheeh: “The last words of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him)”, where he quoted the hadeeth of ‘Aa’ishah (may Allaah be pleased with her) who said: When the Prophet was healthy, he used to say, “No soul of a Prophet is taken until he has been shown his place in Paradise and then he is given the choice.” When death approached him while his head was on my thigh, he became unconscious and thenrecovered consciousness. He then looked at the ceiling of the house and said, “O Allaah! (with) the highest companions.” I said (to myself), “He is not going to choose (to stay with) us.” Then I understood what he meant when he said that to us when he was healthy. The last words he spoke were, “O Allaah! (with) the highest companions.”

نبی کریم ﷺکی وفات کا وقت جب آیا اس وقت آپ ﷺکو شدید بخار تھا_آپ نے حضرتِ بلال ؓ کو حکم دیا کہ مدینہ میں اعلان کردو کہ جس کسی کا حق مجھ پر ہو وہ مسجدِ نبوی میں آکر اپنا حق لے لے_مدینہ کے لوگوں نے یہ اعلان سْنا تو آنکھوں میں آنسو آگئے اور مدینہ میں کہرام مچ گیا، سارے لوگ مسجدِ نبوی میں جمع ہوگئے صحاب کرام رضوان اللہ کی آنکھوں میں آنسوں تھے دل بے چین وبے قرار تھا_ پھر نبی کریم ﷺ تشریف لائے آپ کو اس قدر تیز بخار تھا کہ آپ کا چہرہ مبارک سرخ ہوا جارہا تھا_نبی کریمﷺ نے فرمایا۔

اے میرے ساتھیو! تمھارا اگر کوئی حق مجھ پر باقی ہو تو وہ مجھ سے آج ہی لے لو میں نہیں چاہتا کہ میں اپنے رب سے قیامت میں اس حال میں ملوں کہ کسی شخص کا حق مجھ پر باقی ہو یہ سن کر صحاب کرم رضوان ا للہ کا دل تڑپ اْٹھا مسجدِ نبوی میں آنسوؤں کا ایک سیلاب بہہ پڑا، صحاب کرام رضواناللہ رو رہے تھے لیکن زبان خاموش تھی کہ اب ہمارے آقا ہمارا ساتھ چھوڑ کر جارہے ہیں. اپنے اصحاب کی یہ حالت دیکھ کر فرمایا کہ “اے لوگوں ہر جاندار کو موت کا مزہ چکھنا ہے” میں جس مقصد کے تحت اس دنیا میں آیا تھا وہ پورا ہوگیا ہم لوگ کل قیامت میں ملیں گے۔ ایک صحابی کھڑے ہوئے روایتوں میں ان کا نام عْکاشہ آتا ہے عرض کیا یا رسول ﷺ میرا حق آپ پر باقی ہے آپ جب جنگِ اْحد کے لئے تشریف لے جارہے تھے تو آپ کا کوڑا میری پیٹھ پر لگ گیا تھا میں اسکا بدلہ چاہتا ہوں_یہ سن کر حضرت عمرؓ کھڑے ہوگئے اور کہا کیا تم نبی کریم ﷺ سے بدلہ لوگے؟ کیا تم دیکھتےنہیں کہ آپ ﷺ بیمار ہیں_اگر بدلہ لینا ہی چاہتے ہو تو مجھے کوڑا مار لو لیکن نبی کریم ﷺ سے بدلہ نہ لویہ سن کر آپ ﷺنے فرمایا “اے عمر اسے بدلہ لینے دو اسکا حق ہے اگر میں نے اسکا حق ادا نہ کیا تو اللہ کی بارگاہ میں کیا منہ دکھاؤنگا اسلئے مجھے اسکا حق ادا کرنے دو_آپ نے کوڑا منگوایا اور۔

حضرت عْکاشہ کو دیا اور کہا کہ تم مجھے کوڑا مار کر اپنا بدلہ لے لو_حضرات صحابہ کرام رضوان اللہ یہ منظر دیکھ کر بے تحاشہ رو رہے تھے حضرت عْکاشہ نے کہا کہ اے اللہ کے رسول ! میری ننگی پیٹھ پر آپکا کوڑا لگا تھا یہ سن کر نبی کریم ﷺ نے اپنا کْرتہ مبارک اْتار دیا اور کہا لو تم میری پیٹھ پر کوڑا مار لو، حضرتِ عْکاشہ نے جب اللہ کے رسول ﷺ کی پیٹھ مبارک کو دیکھا تو کوڑا چھوڑ کر جلدی سے آپ ﷺ کی پیٹھ مبارک کو چْوم لیا اور کہا یا رسول اللہ”فَداک اَ بِی واْمی”میری کیا مجال کہ میں آپ کو کوڑا ماروں میں تو یہ چاہتا تھا کہ آپکی مبارک پیٹھ پر لگی مہر نبوّت کو چوم کر جنّت کا حقدار بن جاؤں_ یہ سن کر آپ ﷺ وسلم مسکرائے اور فرمایا تم نے جنّت واجب کرلی۔

Narrated by al-Bukhaari, 4463; Muslim, 2444.

There is a report narrated by Ahmad (1691) from the hadeeth of Abu ‘Ubaydah, who said that the last words that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) spoke were, “Expel the Jews of the Hijaaz and Najraan from the Arabian Peninsula, and know that the most evil of people are those who took the graves of their Prophets as places of worship.” This was classed as saheeh by al-Albaani in al-Saheehah, no. 1132. And Abu Dawood (5156)and Ibn Maajah (2698) narrated that ‘Ali (may Allaah be pleased with him) said: The last words that the Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) spoke were, “The prayer, the prayer! And fear Allaah with regard to those whom your right hands possess.” This was classed as saheeh by al-Albaani in Saheeh Abi Dawood. And there are other similar ahaadeeth. What is meant by these reports is that these are some of the last things that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said, or they were the last pieces of advice that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) gave to his family and companions, and those who would be in authority after he was gone. These ahaadeeth are among the last things he said, but the hadeeth of ‘Aa’ishah is the last of all.

About admin

Check Also

Record breaking flood

Record breaking flood waters have emerged following one of the most devastating hurricanes the US …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *