Home / Islamic Stories / طلاق شدہ عورت سے نکاح

طلاق شدہ عورت سے نکاح

جناب مجھے یہ پوچھنا تھا کہ کچھ مہینے پہلے میں نے نکاح کیا ایک لڑکی سے جو قادیانی تھی اور طلاق شدہ تھی ۲ بچے کی ما ں تھی۔ اس نے مجھ سے اس شرط پی شادی کی کہ میں بھی تھوڑا وقت لوں گی اور اپنا ذھن بدل لوں گی مگر بچو ں کو تم سننی بنانا چاہو تو بنا سکتے ہو تم ان کو جو تربیت دو گے مجھے قبول ہے ۔ تو میں نے بھی ہاں کرلیا کہ اگر وہ تھوڑا ٹائم لے گی۔ مگر میں دونوں بچوں کو تو مسلمان بنا دونگا م۔ گر اب وہ بولتی ہے کہ میں مذہب کے بارے میں اپنا کچھ نہیں بولو ں گی بچوں کو جو تربیت دینی ہے دو مگر میں اپنا دل سے اس بات کو نہیں بھلا سکتی یعنی کہ اپنے مذہب کو وہ ٹھیک بتاتی ہے تو کیا ایسے میں بچوں کی خاطر مجھے اس کے ساتھ رہنا چاہیے یا پھر فوراًالگ ہوجانا چاہیے؟ مجھے وہ پسند بھی بہت ہے۔ براہ کرم، رہنمائی فرمائیں اور ایسے میں میرے مذہب پہ تو مجھے کوئی بات نہیں، میرامطلب کہ گناہ وغیرہ؟
جواب # 41807

قادیانی زندیق ومرتد ہیں۔ ان کی عورتوں سے نکاح حرام ہے اس لیے آپ اس عورت سے الگ رہیں۔ اس سے صحبت کرنا وغیرہ جائز نہیں۔ البتہ آپ اس کو اسلام پر حکمت ونرمی سے آمادہ کریں۔ اگر وہ اسلام کی حقانیت کو تسلیم کرتے ہوئے اسلام لاتی ہے تو آپ اس سے دوبارہ نکاح کرسکتے ہیں۔ اس عورت کے قادیانی رہتے ہوئے اس سے نکاح کرنا یا اس کے ساتھ جائز نہ ہوگا۔

About admin

Check Also

عورتوں کے ساتھ رات گُذارنے پر حکم

حقوق العباد یا ٰخدمت خلق کی قرآن واحادیث میں کس قدر تاکیدکی گئی ہے ان …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *