Home / Islamic Stories / بیوی کو مارکود کر ہمبستری کرنے والوں کےلیے حضور پاکؐ کا فرمان

بیوی کو مارکود کر ہمبستری کرنے والوں کےلیے حضور پاکؐ کا فرمان

اسلام دین فطرت ہے اس نے ہر تعلق کے حوالے سے مسلمانوں کو معلومات بہم پہنچائي ہیں ضرورت صرف اس امر کی ہے کہ مسلمان اس بارے میں آگاہی حاصل کریں ۔کیوںکہ اسلام میں بار بار مسلمانوں کو جاننے یعنی علم حاصل کرنے کا حکم دیتا ہے ۔ بعض چیزیں ایسی ہوتی ہیں جو ہم اپنی عام زندگی میں کر رہے ہوتے ہیں مگر اسلام ان چیزوں کو سختی سے منع فرماتا ہے ۔(جاری ہے) ہ

میاں بیوی کے تعلقات کے حوالے سے بھی اسلام نے مکمل ضابطہ دیا ہے ۔ ایک جانب تو شوہر کو بیوی کا نگہبان بنا کر اس کو یہ حکم دیا کہ اس کے حقوق کا خیال رکھے تو دوسری جانب بیوی کو بھی اس بات کا پابند کیا کہ وہ اپنے شوہر کی خواہشات کا خیال رکھے ۔ موجودہ زمانے میں مرد و عورتوں کی مساوات کی تحریک نے عورتوں کو یہ احساس بھی دلایا کہ مرد اپنی بیوی کے ساتھ جنسی تعلق قائم کر کے اس کے ساتھ زیادتی کا مرتکب ہوتا ہے ۔س واویلے کے سبب کم علم عورتیں مردوں کے حقوق کی انجام دہی سے انکار کرتی ہیں جس سے ان کی خانگی زندگی متاثر ہوتی ہے اور اس کا نتیجہ بڑھتی ہوئی طلاق کی شرح کی صورت میں معاشرے میں نظر آتا ہے ۔ اللہ تعالی نے مرد اور عورت کے ملاپ کے کچھ قواعد وضع کیۓ ہیں ۔جن کو پورا کرنا میاں بیوی دونوں پر واجب قرار دیا ہے ۔عورت کو بھی اس بات کا پابند کیا گیا ہے کہ وہ شوہر کی خواہشات کی تکمیل سے بلا عذر انکار نہ کرے ۔(جاری ہے) ہ

مگر کچھ حالات ایسے بھی ہیں جب مرد اگر ان اوقات میں بیوی سے مباشرت کا تقاضا کرے تو اسلام کے مطابق وہ جنسی زیادتی کا مرتکب قرار پاۓایام حیض کے دوران میاں بیوی کی مباشرت سے اسلام میں منع فرمایا گیا ہے اس کے ثبوت میں سورۃ البقرۃ کی آیت 222 موجود ہے جس میں اللہ فرماتا ہے ۔اور آپ سے حیض کے بارے میں پوچھتے ہیں، کہہ دو وہ نجاست ہے پس حیض میں عورتوں سے علیحدہ رہو، اور ان کے پاس نہ جاؤ یہاں تک کہ وہ پاک ہوجائیں، پھر جب وہ پاک ہو جائیں تو ان کے پاس جاؤ جہاں سے اللہ نےتمہیں حکم دیا ہے، بے شک اللہ توبہ کرنے والوں کو دوست رکھتا ہے اور بہت پاک رہنے والوں کو دوست رکھتا ہے۔ان اوقات کے دوران اگر کوئی شوہر اپنی بیوی کے ساتھ زبردستی مباشرت کرنے کی کوشش کرے گا تو اس کو زبردستی زیادتی قرار دیا گیا ہے ۔اللہ تعالی نے عورت اور مرد کے اندر جنسی خواہشات اس لیۓ پیدا کی ہیں تاکہ وہ اس کے ذریعے اپنی نسل کو بڑھا سکیں ۔ اس خواہشات کی تکمیل کے لیۓ غیر فطری راستے اور ذریعے استعمال کرنا اسلام میں سختی سے ممنوع قرار دیا گيا ہے سورۃ البقرۃ کی آیت 223 میں اللہ تعالی فرماتے ہیں(جاری ہے) ہ

تمہاری بیویاں تمہاری کھیتیاں ہیں پس تم اپنی کھیتیوں میں جیسے چاہو آؤ، اور اپنے لیے آئندہ کی بھی تیاری کرو، اور اللہ سے ڈرتے رہو اور جان لو کہ تم ضرور اسے ملو گے اور ایمان والوں کو خوشخبری سنا دوجس طرح کھیتی کرن کا قاعدہ ہوتا ہے اسی طرح مباشرت کے لیۓ بھی غیر فطری راستوں کا استعمال ممنوع ہے ۔اگر بیوی روزے کی حالت میں ہو تو اس حالت میں اس کے ساتھ زبردستی مباشرت کرنا جنسی زیادتی کے زمرے میں آتا ہے اور اس سے اسلام میں منع فرمایا گیا ہے ۔(جاری ہے) ہ

یہ سب وہ صورتیں تھیں جن کو کرنے سے گناہ کا وبال انسان کے اوپر آتا ہے اور بظاہر وہ اپنی خواہشات کی تکمیل اپنی منکوحہ سے کر رہا ہوتا ہے مگر اس کے سبب اس کو وہی گناہ حاصل ہوتا ہے جو کسی بھی انسان کو جنسی زیادتی کی صورت میں ملتا ہے ۔

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔

About admin

Check Also

When is the End of Times Coming? – End of the World?

This is a great question and if one is to believe all that has been …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *